Saturday, 01 October 2022
  1.  Home/
  2. Nusrat Javed/
  3. Sarkar Ki Safakana Beniazi

Sarkar Ki Safakana Beniazi

تقریباََ ہر شخص جبلی طورپر دوسرے انسانوں کی توجہ کا طلب گار ہوتا ہے۔ فیس بک، انسٹا گرام اور ٹویٹر جیسے پلیٹ فارم ایجاد کرنے والوں نے مذکورہ کمزوری کا فائدہ اٹھایا۔ لوگوں کو آسانی فراہم کردی کہ جب چاہے کچھ بھی کرتے یا کہتے ہوئے اسے سوشل میڈیا پر پوسٹ کرنے کی بدولت لوگوں کی توجہ اپنی ذات اور خیالات کی جانب کھینچنے کی کوشش کریں۔ یوٹیوب جیسے پلیٹ فارموں نے ایسے افعال کو Monetizeبھی کردیا۔ گھر بیٹھے "لاکھوں ڈالر" کمانے کے خواب دکھائے اور اکثر نوجوان ان کے حصول میں مصروف ہوگئے۔

سوشل میڈیا نے جو رحجانات متعارف کروادئے ہیں ان کا توڑ ممکن نہیں۔ ریاست اس کام میں الجھ جائے تو اسے "غیر مہذب یا تخریبی خیالات کا فروغ" ناممکن بنانے کے لئے لاکھوں جتن کرنا پڑتے ہیں۔ ہمارے دوست چین نے مثال کے طورپر فقط اپنے ملک کے مخصوص سرچ انجن یا باہمی گفتگو کے پلیٹ فارم بنارکھے ہیں۔ معاشی اعتبار سے پاکستان جیسے کمزور ممالک چین کی نقالی کے قابل نہیں۔ روس نے کئی برسوں تک سوشل میڈیا کے بین الاقوامی پلیٹ فارموں کو برداشت کیا۔ یوکرین پر حملہ آورہوجانے کے بعد اس کا صبر بھی لیکن جواب دے گیا۔ بھارت بھی اپنی افرادی قوت کے بل بوتے پر سوشل میڈیا کو اس کی اوقات میں رکھنے کے لئے لاکھوں جتن کررہا ہے۔

سوشل میڈیا کی بدولت پھیلا ہیجان مگر آج کے کالم کا موضوع نہیں۔ بطور صحافی کئی مہینوں سے میں ذاتی طورپر اس فکر میں مبتلا ہوں کہ "نوائے وقت" جیسے روایتی اخبار کے لئے کالم لکھتے ہوئے مجھ جیسے عامل صحافی بھی فقط ان موضوعات تک محدود رہتے ہیں جن کے بارے میں لکھا جائے اور چھپ جانے کے علاوہ سوشل میڈیا پر بھی موجود ہوتو ہماری تحریر کو زیادہ سے زیادہ لائیک اور شیئر ملیں۔ سوشل میڈیا کی بدولت ستائش کی ہوس ہمیں کئی ایسے موضوعات سے لاتعلق رکھتی ہے جو لاکھوں پاکستانیوں کی روزمرہّ زندگی کے لئے اہم ترین ہیں۔ ان کی بابت غفلت اختیار کرتے ہوئے ہم درحقیقت پیشہ وارانہ کوتاہی کا ارتکاب کررہے ہیں۔ بھول چکے ہیں کہ "صحافت" کا بنیادی فریضہ "خبر" دینے کے علاوہ لوگوں کی زندگی اجیرن بنادینے والے چند معاملات کے بارے میں ٹھوس معلومات فراہم کرنا بھی ہے۔

شہری متوسط طبقہ کی بے پناہ اکثریت ان دنوں عمران خان صاحب کے فرمودات کے علاوہ کچھ پڑھنا اور دیکھنا ہی نہیں چاہتی۔ گزشتہ کئی دنوں سے میرے لکھے کئی کالم بھی تواتر سے عمران خان صاحب کے ذکر سے شروع ہوکر اس پر ختم ہوجاتے ہیں۔ اس وجہ سے میں آپ کو اب تک یہ "اطلاع" دینے میں قطعاََ ناکام رہا کہ گزشتہ دو مہینوں سے ہمارے ہاں دودھ دینے والے مویشی ایک خوفناک وبا کی زد میں ہیں۔

اس کی وجہ سے ہزاروں جانور مرچکے ہیں۔ یہ وبا برقرار رہی تو ہمارے ہاں دودھ کی شدید قلت بھی پیدا ہوسکتی ہے۔ ممکنہ قلت سے زیادہ اہم مگر یہ حقیقت ہے کہ ہمارے ہاں لاکھوں گھرانے اپنے ہاں پالے چند مویشیوں کا دودھ بیچ کر روزمرہّ اخراجات کے لئے رقم جمع کرتے ہیں۔ ان کا مویشی وبا کا شکار ہوجائے تو واقعتا جان کے لالے پڑجاتے ہیں۔ ان کے اس دُکھ کا مگر ہمارے اخبارات اور روایتی میڈیا میں کماحقہ ذکر نہیں ہورہا۔

جس وبا کا میں ذکر کررہا ہوں اسے Lumpy Skin Diseaseپکارتے ہیں۔ یہ بنیادی طورپر مچھر کے کاٹنے سے پھیلتی ہے۔ اس کا لگایا "ڈنگ" دودھ دینے والے مویشی کے خون میں زہریلے جراثیم شامل کردیتا ہے۔ وہ جراثیم بتدریج مویشی کی کھال پر "دانوں" کا جال بچھا دیتے ہیں۔ ساری جلد پھنسیوں سے بھرجاتی ہے۔ چند دن گزرجانے کے بعد مویشی کے جسم میں پھیلی پھنسیاں کراہت آمیز پھوڑوں میں بدل جاتی ہیں۔ مویشی ان سے بے بس ہوکر کھانا پینا چھوڑ کر کامل بے بسی کے عالم میں مبتلا ہوجاتاہے۔

یہ بیماری ہمارے خطے کے لئے قطعاََ نئی تھی۔ ہمارے ہاں پالے مویشیوں کو صحت مند رکھنے کے لئے عموماََ جو ویکسین باقاعدگی سے لگائی جاتی ہےں وہ مذکورہ وبا کا موثر تدارک نہیں۔ ہمارے ہاں مویشیوں کے "باڑوں" میں ویسے بھی صفائی ستھرائی کا نہایت توجہ سے بندوبست یقینی نہیں بنایا جاتا۔ مچھر ایک غول کی صورت جانوروں پر بھنبھناتے رہتے ہیں۔ عموماََ انہیں گوبر کے ڈھیر میں سلگائی آگ سے اُٹھے دُھویں سے بھگانے کی کوشش ہوتی ہے۔

میری اطلاع کے مطابق ابھی تک جو مویشی مذکورہ وبا کی زد میں آئے تھے ان کی 80فیصد تعداد جانبر نہ ہوپائی۔ اموات کے اس خوفناک تناسب کی وجہ یہ حقیقت تھی کہ ہمارے"ڈنگر ڈاکٹروں" کی اکثریت کے پاس مذکورہ وبا کا شافی علاج موجود ہی نہیں تھا۔ وبا کی زد میں آئے مویشی کو وہ ضرورت سے زیادہ اینٹی بائیوٹک انجکشن یا پنسلین سے بنائے ٹیکے لگاکر بچانے کی کوشش کرتے رہے۔ جو "تکے" لگائے گئے وبا کی زد میں آئے مریض کو شفا فراہم کرنے کے بجائے اسے مزید کمزور بناتے رہے۔

شہری متوسط طبقے کی ترجیحات کے غلام ہوئے مجھ جیسے صحافیوں کو اندازہ ہی نہیں کہ دودھ دینے والے مویشیوں میں جو وباپھیل رہی ہے اس نے ہزاروں نہیں لاکھوں خاندانوں کو باؤلا بنارکھا ہے۔ انہیں پالنے والے دیسی ٹوٹکوں کے ذریعے مویشی کے خون سے "زہر نکالنے" کی کوشش کررہے ہیں۔ جو "ٹوٹکے" نسلوں سے انہیں بتائے گئے تھے مگر اس مرض میں کام نہیں آرہے۔ ماہر ڈاکٹر کی نگرانی لازمی ہے۔ ایسا ڈاکٹر ایک "پھیرے" کے کم از کم ہزار روپے طلب کرتاہے۔

اس کے بعد وہ جو ادویات کا نسخہ تیار کرتا ہے انہیں خریدنے کو بھی کم از کم پانچ سے دس ہزار روپے درکار ہوتے ہیں۔ یہ خرچہ دو یا تین گائیں رکھنے والے شخص کی بساط سے کہیں زیادہ ہے۔ آفت اور وبا کے اس عالم میں میرے اور آپ کی "مائی باپ" ہوئی "سرکار"کہیں نظر ہی نہیں آرہی۔ دودھ دینے والے مویشیوں اور ان کے دئیے دودھ سے اپنے رزق کے محتاج ہوئے لاکھوں پاکستانیوں کو مشکل کی اس گھڑی میں"سرکار" نے سفاکانہ بے نیازی سے بھلارکھا ہے۔

About Nusrat Javed

Nusrat Javed, is a Pakistani columnist, journalist and news anchor. He also writes columns in Urdu for Express News, Nawa e Waqt and in English for The Express Tribune.